وحدت الوجود

خدا کے سوا عالم میں کوئی اور شے ہے ہی نہیں یا جو کچھ ہے وہ ہے ہم سب ہم سب کچھ نہیں اس عقیدے یا نظریے کا نام وحدت الوجود یا ہمہ اوست ہے۔ اس عقیدے کی رو سے صوفیوں کے نزدیک یہ ثابت ہوتا ہے کہ خدا کے سلسلئہ کائنات سے ایک الگ اور جدا گانہ ذات ہونے کا خیال صحیح نہیں جیسا کہ اہل ظاہر کی رائے ہے اگرچہ یہ عقیدہ کہ اللہ تعالیٰ سلسلہ کائنات سے الگ نہیں تمام صوفیائے کرام کے نزدیک تسلیم شدہ امر ہے۔ لیکن اس عقیدے کی تعبیر میں ان کے یہاں بھی اختلاف ہے مولانا روم کہتے ہیں۔
    چوہست مطلق آمد درعبارت
    بہ لفظ من کنند ارزو ے اشارت
وجود مطلق جب تشخصات و تعینات میں جلوہ افروز ہوتا ہے تو ممکنات کے اقسام پیدا ہوتے۔ یہ اقسام کس طرح پیدا ہوتے ہیں۔ بالکل اسی طرح جیسے حباب اور موج ہر چند یہ قسمیں مختلف ذاتیں شمار کی جاتی تھیں۔ لیکن حقیقت میں ان کا وجود پانی کے سوا اور کچھ نہیں چنانچہ مولانا کہتے ہیں۔
    گفتم از وحدت و کثرت سخنے گوئی بہ رمز
    گفت موج و کف و گرداب ہمانا دریا ست
یا ایک مثال سے یوں سمجھئے کہ جس طرح دھاگے میں جو گرہیں لگائی جاتی ہیں۔ ان کا وجود اگرچہ دھاگے سے ایک الگ اور علیحدہ شے نظر آتا ہے۔ لیکن واقعتہ گرہ دھاگے سے کوئی مختلف چیز نہیں۔
وحدت الوجود کے مسئلہ پر غالب علیہ الرحمتہ فرماتے ہیں۔
    اے زوہم غیر غو فادر جہاں انداختہ
    گفتہ خود ھرتے خود رادرگماں انداختہ
اے خالق تو نے عالم کے غیر و ماسوا ہونے کا وہم دلوں میں ڈال دیا ہے لیکن تو نے درحقیقت خود ہی ایک حرف کن کہہ کر اپنے آپ کو اس گمان کا شکار بنایا ہے کہ مخلوق اپنے خالق سے کوئی علیحدہ شے ہے۔
    دیدہ بیروں دوروں از خویشتن پر دانگہی
    پردہ رسم پرستش درمیاں انداخستہ
جو نور آنکھ کے اندر ہے وہی آنکھ کے باہر ہے گویا تیری آنکھیں اپنے ہی نور سے اپنا ظہور دیکھ رہی ہیں۔ یعنی شاہد و مشہود ، ناظر و منظور اور عابد و معبود ایک ہی ذات ہے اے خالق تو نے دوئی کا دھوکہ دے کر پرشتش کی رسم کا پردہ اپنی ہی دو حیثیتوں کے درمیان ڈال دیا ہے۔
    یا چنیں ہنگامہ در وحدت نمی گنجد دوئی   
    مردہ را از خویش دریا بر کر اں اند اخستہ
مگر اے خالق کثرت کی ہنگامہ آرائی کے باوجود تیری یکتائی میں دوئی کی مطلقا کوئی گنجائش نہیں۔ دریائے وحدت نے دوئی کو اس طرح نکال باہر کیا ہے جس طرح کوئی مردہ (لاش) موجوں کے تھپیڑے کھاتے ہوئے ساحل دریا سے آلگے۔    وجودی صوفیوں اور فلسفیوں نے وحدت و کثرت کے موضوع کو نہایت آسان اور صادہ الفاظ میں سمجھانے کے لئے بیشتر مثالیں دی ہیں۔ مثلاً
مولانا رومؒ کہتے ہیں، لوہا جب آگ میں گرم کیا جاتا ہے تو وہ گرمی آتش پکڑ کر ہمرنگ آگ بن جاتا ہے اگرچہ وہ آگ نہیں بن جاتا۔ تاہم اس میں آگ کی تمام خاصیتیں پیدا ہوجاتی ہیں۔ حتیٰ کہ یہ تسلیم کرنا پڑتا ہے کہ وہ آگ ہوگیا۔ وجود ی صوفیہ کہتے ہیں کہ حدیث نبوی میں ہے۔کہ خلق الادم علیٰ صورتہِ یعنی اللہ تعالےٰ نے آدم کو اپنی صورت پر پیدا کیا ہے چنانچہ اسی مناسبت سے انسان میں جو مختلف صفات پائی جاتی ہیں۔ وہ سب کی سب صفات ربانی ہیں یا دوسرے لفظوں میں یوں کہئے کہ مظہر خدا وندی ہیں۔
صوفیائے کرام کہتے ہیں کہ اللہ تعالےٰ کے بہت سے نام ہیں۔ مثلاً رحمٰن۔ رحیم۔ ستار۔ غفار۔ قھار۔ جبار۔ رزاق۔ یعنی مسمی واحد اور اسما ء بہت سے ہیں۔ لیکن اللہ تعالےٰ کے ہر اسم سے ایک ہی ذات مراد لی جاتی ہے۔ گویا اس اعتبار سے واحد مسمیٰ کے متعدد اسماء اس کے عین ہیں اور یہ تمام اسماء اس کی صفات پر دلالت کرتے ہیں۔ پھر یہ بات ذہن نشین کر لیجئے کہ صفات سے ممکنات کا ظہور ہوا ہے جس کا مطلب یہ ہوا کہ اس کائنات کی ہر شے کسی نہ کسی اسم کی مظہر ہے اس لئے ثابت یہ ہوا ہے کہ موجودات کی ہر چیز عین ذات ہے۔ اللہ تعالیٰ تمام موجودات کاظل اور ان کی اصل ہے۔ کائنات اس کاظل اور ظل حقیقت میں اصل کا مظہر ہوتا ہے۔ جیسے انسان کا جب زمین پر سایہ پڑتا ہے۔ تو بظاہر وہ ایک الگ شے معلوم ہوتا ہے۔ لیکن حقیقت میں اس کا کوئی وجود نہیں جو کچھ ہے انسان ہی ہے۔ اسی طرح کائنات کا وجود غیر حقیقی اور صرف خیال ہے وجود صرف خدا کا ہے۔ کائنات وکثرت صرف وحدت کے اعیان و مظاہر کی حیثیت سے دکھائی دیتی ہے۔ بذاتہ ِ اس کا اپنا کوئی وجود نہیں اس لئے وجود جو ہے وہ وحدت ہی کا ہے اصغر کہتے ہیں۔
    پھر میں نظر آیا نہ تماشا نظر آیا
    جب تو نظر آیا مجھے تنہا نظر آیا
درد کہتے ہیں۔
    ماہٹتیوں کو روشن کرتا ہے نور تیرا
    اعیان ہیں مظاہر ، ظاہر ظہور تیرا
غالب کہتے ہیں
    ہے مشتمل نمود صور پر وجود بحر
    یاں کیا ہے قطرہ و موج و جہاں میں
ایضا ً
    اصل شہو دو شاہد مشہود ایک ہے
    حیراں ہوں پھر مشاہد ہ ہے کس حساب میں
درد کہتے ہیں۔
    جمع میں افراد عالم ایک ہیں
    گل کے سب اوراق برہم ایک ہیں۔
میسر کہتے ہیں۔
    گوش کو ہوش کے ٹک کھول کے سن شور جاب
    سب کی آواز کے پردے میں سخن ساز ہے ایک
وحدت الوجود کے اس عقیدے کی بدولت بعض اذہان اس خیال کی طرف جاتے ہیں۔ کہ فرعون جو خدا ہونے کا مدعی ہوا۔ اس نے کیا غلط کیا اور اناالحق کی جو آواز منصور کے منہ سے نکلی اس میں کیا برائی تھی۔ جب وحدت الوجود کے نظریے کی رو سے ہر شے خدا ہے تو ناحق ان لوگوں کو مورد الزام ٹھہرایا گیا۔
درحقیقت یہ مسئلہ اس قدر نازک ہے کہ اگر اس کی تعبیر میں ذرا سی بھی لغزش ہو جائے تو اس کی حدیں کفر و الحاد اور زند یقیت سے جا ملتی ہیں۔ ہم وحدت الوجود کے موضوع کو قدرے تفصیل سے بیان کریں گے۔ اور جہاں جہاں مجدد و الف ثانی نے وجودیوں سے اختلاف کیا ہے۔ا نہیں بالا جمال پیش کریں گے۔
عقیدہ وحدت الوجود:
عقیدہ وحدت الوجود کو سب سے پہلے ذوالنون مصری نے (متوفی ۵۴۲) تیسری صدی ہجری میں پیش کیا۔
ظاہر ہے کہ موصوف مصر کے رہنے والے تھے اس لئے ان کا اشراقیت جدیدہ سے متاثر ہونا قطعی ممکن ہے۔ یہ انہی اثرات کا نتیجہ تھا کہ جناب ذوالنون مصری نے اپنی افقا و طبع سے تصوف اسلام کو وحدت الوجود ایسا پیچیدہ عقیدہ بخشا اور اس کے نظریات میں وجد و معرفت کے خیالات شامل کئے اور نوفلا طونی رجحانات کو صوفیائے اسلام کے ذہن میں رائج کیا۔
جناب مصری کے علاوہ ان کے ہم عصر بزرگ جناب یا یزید بسطامی نے بھی اس سلسلے میں بڑا کام کیا انہوں نے صوفیہ کو خود فراموشی اور فنا کے مسائل تعلیم کئے۔ اور وحدت الوجود کے نظریات کو شطحیات کے انداز میں پیش کیا اور پھر ان کے مرید جناب ابوسعید ابوالخیر نے اپنی رباعیات میں اپنے مرشد کے موضوع مسخن کو بڑی ترقی دی واضح رہے کہ یہ ابو الخیر وہی بزرگ ہیں جن کا اسم گرامی بھی جناب مخدوم علی ہجویری رحمتہ اللہ علیہ صاحب کشف المجوب کے اساتذہ کی فہرست میں شامل ہے۔
مختصرا ً یہ کہ تیسری صدی ہجری علم تصوف کی تصنیفات و تالیفات کا ابتدائی زمانہ ہے اس دور میں جو کتابیں لکھی گئیں ان میں جناب جنید بغدادی المتوفی ۹۲ ھ کی کتاب رسالہ القصدالی اللہ عربی زبان میں تصوف کی قدیم تریں کتاب خیال کی جاتی ہے۔ جناب جنید بغدادی نے تصوف کے مسائل میں ایک ترتیب اور ضابطہ پیدا کیا فقہ اور تصوف کے موجوع سے صوفیائے کرام اور علمائے عظام کے درمیان جو آویزش پیدا ہوگئی تھی اسے یہ کہہ کر مٹانے کی سعی بلیغ فرمائی کہ شریعت اور طریقت دو علیحدہ اور الگ الگ راہیں یا مسلک نہیں بلکہ ایک ہی تعلیم کے دورخ ہیں جو آپس میں ایک دوسرے سے مختلف نہیں بلکہ دونوں ایک ہی ہیں۔
بعضوں کا خیال ہے کہ تصوف کے موجوع پر جس نے سب سے پہلے قلم اٹھایا و ہ جناب یحیٰ بن ؓ معاذ رازی ہیں۔ اور اپنے دعوے کے ثبوت میں وہ رازی کی کتاب المریدین پیش کرتے ہیں۔ جناب معاذ رازی نے ۶۰۲ ہجری میں وفات پائی ان کے علاوہ شیخ ابو النصر  سراج (متوفی ۸۷۳ ھ) نے کتاب اللمع لکھی نیز عبدالکریم بن ہوازن قیشریہ تحریر کیا جس میں فنا۔ بقا۔ بسط۔ تال  اور جمع و تفرقہ وغیرہ صوفیانہ اصطلاحات قائم کیں۔
علاوہ ازیں تیسری صدی ہجری ہی ہیں تصوف کے مختلف سلسلے قائم ہوئے جو بڑھتے بڑھتے پھر سینکڑوں کی تعداد تک پہنچ گئے۔ تصوف کے ابتدائی سلسلوںمیں سے چند ایک یہ تھے مثلاً
۱۔    محاسبیہ اس کے بانی جناب جنید بغدادی کے محترم بزرگ جناب عبد اللہ حارث محاسبی متوفی ۳۴۲ ھ ہیں۔ انہوں نے حال و مقام کے اصطلاحی فرق مقرر کئے اور بہت سی صطلاحات قائم کیں۔
۲۔    قیصریہ اس سلسلے کو جناب شیخ قیصری نے قائم کیا اس سلسلے کی بنیاد امت پر ہے یعنی اس کے پیر و بظاہر ایسے کام کرتے جس سے ان کی لوگوں میں رسوائی ہو اور انہیں ملامت کی جائے۔ ان لوگوں کو اسی اعتبار سے ملامتیہ بھی کہا جاتا ہے۔ یہ لوگ یہ تمام اہتمام اس لئے کرتے ہیں کہ ان کی اطاعت اور زہد و عبادت ریا کاری نہ بن جائے۔
۳۔    طیغوریہ اس سلسلے کی ابتدا جناب ابویز ید طیغوری بسطامی سے ہوئی انہوں نے اپنے مقتدین کو صحود سکر کی تعلیم دی۔ صحود سکر کا مختصر بیان "کشف المجوب کے مضامین کے باب میں کسی مقام پر پیش کریں گے۔
۴۔    جنید یہ تصوف کا یہ سلسلہ جناب جنید بغدادی نے قائم کیا جس کی بنیاد صحو و محبت پر تھی اور مراقبہ و مجاہدہ خاص شغل قرار پایا۔
چوتھی صدی ہجری میں حسین بن منصور رحلاج نے مقتدر با اللہ عباسی کے عہد خلافت میں وحدت الوجود کے نظریات کو ایک نئے انداز میں پیش کرنا شروع کیا اب تک تعلیم و تلقین اشارے اور کنائے میں ہوئی یا گوشئہ خلوت میں کہا جاتا لیکن منصور نے بر سر عام لب کشائی کرنا شروع کر دیا۔ یہاں تک کہ وحدت الوجود کے فتنے سے بچنے کے لئے منصور کو ۹۰۳ ھ میں سولی پر لٹکانا پڑا۔
منصور سے متعلق علمائے کرام میں غم و غصہ اور اختلاف تو تھا ہی اہل تصوف بھی اختلاف پیدا ہوگیا۔ ایک گروہ کے نزدیک اسے واجب التعظیم ٹھہرایا گیا ہے اور دوسرے گروہ نے اسے ملحدوز ندیق خیال کیا ہے۔
فرید الدین عطار نے منصور کو قتیل اللہ فی سبیل اللہ شیر بثیہ تحقیق ایسے القاب سے یاد کیا ہے۔ ابو بکر شبلی کہتے تھے کہ میں اور منصور نے عقل سے جان گنوالی اور میں نے جنون سے اپنی جان بچالی جناب فریدالدین عطار  کے ساتھ ساتھ اس بات کا بھی اعتراف کرتے ہیں کہ بعض مشہور صوفیائے کرام منصور کی بزرگی تسلیم نہیں کرتے۔
جناب مخدوم علی ہجویری اپنی کتاب کشف المجوب میں لکھتے ہیں کہ جناب منصور کی حلاج کی تعظیم و تکریم کرتا ہوں لیکن کسی کو ان کے مسلک کی پیروی کی اجازت نہیں دے سکتا کیونکہ اس کی بنیاد نہیں۔ چنانچہ ہجویری کے اس قول کی روشنی میں اگر دیکھا جائے تو یہ خیال یقیناً صحیح معلوم ہوتا ہے۔ کہ وحدت الوجود کے مسئلہ پر جن خیالات کا اظہار منصور نے کیا ہے۔ قدیم صوفیہ کو ان سے دور کا  بھی تعلق نہ تھا۔
پانچویں صدی ہجری میں امام غزالی نے اس ما بعد الطبعی نظام کو مٹانے یا اس کی اصلاح کرنے کی سعی بلیغ فرمائی جو ایرانی وہندوستانی مذاہب کے اثر سے تصوف میں شامل ہو چکا تھا۔ نیز امام غزالی نے مسائل تصوف اور احکام شریعت میں باہم مطابقت کرنے کی مقدور بھر کوشش کی جس سے پایہ تصوف علمائے اسلام کی نگاہ میں بلند نظرآنے لگا علاوہ ازیں امام غزالی نے سفر۔ سالک۔ تجلی۔ فصل، علت ، مکان ۔ رسم ہمت اور ذہاب وغیرہ ہم صوفیانہ اصطلات وضع کیں۔ ۰۱ حیا العلوم کیمیائے سعادت اور مشکواۃ انوار وغیرہ کی مشہور تصنیفات ہیں۔ امام غزالی کے بعد خواجہ فرید الدین عطار نے تصوف کے موضوع پر خامہ فرمائی کی اور مثنوی منطق الطیر اور تذکرۃ اولیا ایسی دو بلند پایہ کتابیں لکھیں پھر ان کے بعد جناب مولاناجلال الدین رومیؒ کا نام آتا ہے جن کی مثنوی کے بارے میں یوں کہا جاتا ہے۔
    مثنوی مولوی معنوی
    ہست قرآن درزبان پہلوی
آخر میں جنا ب خواجہ عبید اللہ احرارؒ کے شاگرد مرید مولانا عبدالرحمٰن جامیؒ آتے ہیں۔ نفحات الانس بوائج جامی آپ کی تصوف کے موضوع پر ذومشہور کتابیں ہیں۔ مختصرا ً یہ کہ تصوف اپنے علمی ادوار کے ساتھ ساتھ وحدت الوجود کے نظریات کی برابر اشاعت کرتا رہا حتیٰ کہ محی الدین عربی ؒایسے عرب نژاد فلسفی کا زو رقلم اسے میسر آگیا۔ جناب محی الدین ابن عربیؒ جو اپنے علمی تبحر کی بدولت شیخ اکبر کہتے ہیں سب سے پہلے بزرگ ہیں جنہوں نے وحدت الوجود کے نظریے کو خالص فلسفیانہ انداز میں پیش کیا اور اس سلسلے مےں قصوص الحکمان کی معرکتہ الآراتصنیف خیال کی جاتی ہے۔ اس کتاب کی مقبولیت کا اس سے بڑھ کر او رکیا ثبوت ہوگا کہ شیخ اکبر باوجود عربی نژاد کے ہونے کے ایرانی صوفیاء آج تک ان کی تحریم و تکریم بجا لاتے ہیں اور کتاب کا نہایت ذو ق و شوق سے مطالعہ کیا جاتا ہے۔
حاصل کلام یہ کہ چھٹی صدی ہجری میں شیخ محی الدین ابن عربی المتوفی ۰۶۵ ہجری نے وحدت الوجود کے مسئلے کو فلسفیانہ انداز اور استد لالی رنگ میں پیش کیا  قصوص الحکم کے علاوہ فتوحات مکیبہ بھی تصوف کے موضوع پر ان کی مشہور تصنیف ہے۔
وحدت الوجود کے نظریے کو قرآن حکیم کی تعلیمات کے عین مطابق ثابت کرنے کے لئے جو آیات قرآنی پیش کی جاتی ہیں ان مین سے چند ایک یہ ہیں۔
۱۔    ھو الاول ھو الآخر ھو الظاہرھو الباطن:  وہی اول ہے وہی آخر ہے وہی ظاہر ہے۔ وہی باطن ہے۔
۲۔    اللہ نور السموات والارض        اللہ آسمانوں اور زمینوں کا نور ہے۔
۳۔    ھو معکم امین ما کنتم                 وہ تمہارے ساتھ ہے تم جدھر بھی رخ کرو
۴۔    فاینما تو لو فثم وجہ اللہ                     تم جس طرف بھی منہ کرو اس طرف اللہ کا منہ ہے۔
    ابتدائی دور کے جن بزرگوں کو یہ لوگ صوفیائے قدیم ٹھہراتے ہیں ان کے یہاں دیکھئے تو ان باتوں کا مطلقاً کوئی گزر نہیں۔ مثلا ً خواجہ حسن بصری ؒ،ابراہیم ادہم  ؒ فضیل بن عیاض ؒ،امام سفیان ثوری رحہم اللہ تعالیٰ اجمعین کے یہاں خیالات نے رمزو کنائے یا تشبیہ واستعارہ کی صورت اختیار نہیں کی تھی۔ یا با الفاظ دیگر یوں کہئے کہ ان بزرگوں کی (زبان) نثر نے نظم کی یعنی شاعری کی صورت اختیار نہیں کی تھی۔
    لیکن جب سے تصوف کی زبان شعرو شاعری کے حلقے میں آئی تب سے اس موضوع پر نئے نئے خیالات اور افکار پیش ہونے لگے۔ حتیٰ کہ تصوف کے تمام مسائل پر وحدت الوجود کا مسئلہ بازی لے گیا۔ بلکہ مسائل تصوف ہیں وحدت الوجود کا نظریہ جان تصوف ٹھہرا جو سراسر عجمی ذہن کی پیداوار ہے۔
    در اصل اللہ تعالےٰ نے قرآن حکیم میں اپنی کہنہ، کائنات کی تخلیق ۔ مخلوقات کی حقیقت اور خالق و مخلوق کے درمیان جو رشتہ ہے ان مسائل سے متعلق کوئی مکتبہ فکر قائم نہیں کیا۔ جب اسلام کا دائرہ وسیع ہونے لگا۔ اور غیر مسلموں نے اسلام قبول کرنا شروع کرنا شروع کیا تو ان کے اذہان اسلام کی تعلیمات سے پورے طور پر مستفید نہ ہونے کے سبب ان مسائل کی طرف پھر گئے جن کی بنیاد پر وحدت الوجود کا عقیدہ قائم ہوا۔   
    قرآن حکیم میں چونکہ اللہ تعالیٰ کے اول و آخر حاظر و ناظر ۔ ظاہر و باطن۔ قادر و غالب۔ جبار وقہار  اور رب نور السموات والارض ہونے کا ذکر بار بار آیا ہے۔ اس لئے جب مذکورہ بالا مسائل پیدا ہوئے تو انہوں نے اللہ تعالیٰ کی ان صفات سے بآسانی " وحدت الوجود " کے نظریے کی صورت میں حل تلاش کر لیا۔
    قرآن حکیم میں سے ایسی آیات موجود ہیں جن سے مذکورہ بالا قسم کے مسائل کا استبناط کر کے عقل کے مطالبات پورے کئے جاسکتے ہیں۔ لہٰذا وحدت الوجود کا مسئلہ خالص فلسفیانہ شان میں وجود پذیر ہوا جس کی آگے چل کر محی الدین ابن عربی ؒ نے فلسفیانہ انداز میں نوک پلک سنواری۔
    محی الدین ابن عربیؒ کی تحریر کا خلاصہ یہ ہے کہ وجود صرف وحدت کا ہے دوسرے لفظوں میں یوں کہئے کہ خدا کے سوا کسی دوسری شے کو وجود ہے ہی نہیں۔ جو کچھ ہے خدا ہے ہم سب کچھ نہیں۔ اگرچہ کائنات اور اس کی بے شمار اشیا ہر وقت انسان کے مشاہدے اور استعمال میں آتی رہتی ہیں۔ وہ بد یہی طور پر موجود نظر آتی ہیں۔ تاہم وجود کو وحدت محض میں منحصر کر دینے کے بعد ان تمام اشیاکے وجود سے انکار کرنا لازم ہے ۔ ہر چند کائنات وجود تو رکھتی ہے لیکن اس کا وجود حقیقی نہیں بلکہ وہ اللہ تعالیٰ کے وجود کاظل یا پر تو ہے اگرچہ خدا کی صفات میں تعدد ہے۔ لیکن تمام صفات عین ذات ہیں۔ او ر یہ کائنات اللہ تعالیٰ کی صفات کی تجلی کا نام ہے لہٰذا اس اعتبار سے وہ بھی اپنے ظہور مےں عین ذات ہے۔
    کائنات کا وجود فی نفسہٖ کچھ نہیں صرف اللہ تعالیٰ کی صفات کا ظہور ہے اور چونکہ صفات عین ذات ہیں۔ اس لئے کائنات اور خدا کی ذات میں عینیت کا علاقہ ہے اور خدا کی ذات چونکہ وحدت مطلقہ ہے اس لئے وجود وحدت ہی وحدت کا ہے۔ پس یہی وحدت الوجود یا ہمہ اوست کا نظریہ ہے جو اسلام کی تعلیمات کے عین مطابق ہے۔ابن عربی کہتے ہیں اللہ تعالیٰ قرآن حکیم میں فرماتا ہے ۔نحن اقرب الیہ من حبل الورید کہ ہم انسان سے اسکی شہ رگ سے بھی زیادہ قریب ہیں۔ اس قربت کا مطلب یہ ہے کہ اس کے سوا کچھ اور نہیں کہ اللہ تعالیٰ ہی انسان کے اعضاء و جوارح کا اصل ہے اس لئے خدا اور انسان میںعےنےت ہے۔ اسی طرح حدیث میں بھی آتا ہے ہے خلق الادم علیٰ صورتہٖ یعنی اللہ تعالیٰ نے آدم کو اپنی صورت پر پیدا کیا۔ پس اس سے یہ ثابت ہوا کہ انسان میں اللہ تعالیٰ کی تمام صفات موجود ہیں۔ یہی سبب ہے کہ انسان کو اپنے نفس کی معرفت حاصل کرنے کی توجہ دلائی گئی ہے۔ کیونکہ اپنے نفس کی معرفت اللہ تعالیٰ کی معرفت کے حصول کا ذریعہ ہے من عرف نفسہ فقد عرف ربہ جس نے اپنے نفس کو پہنچانا اس نے اپنے رب کو پہچان لیا۔

 
 
6.png